Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

خرد نے مجھ کو عطا کی نظر حکيمانہ


خرد نے مجھ کو عطا کی نظر حکيمانہ
سکھائی عشق نے مجھ کو حديث رندانہ
نہ بادہ ہے ، نہ صراحی ، نہ دور پيمانہ
فقط نگاہ سے رنگيں ہے بزم جانانہ
مری نوائے پريشاں کو شاعری نہ سمجھ
کہ ميں ہوں محرم راز درون ميخانہ
کلی کو ديکھ کہ ہے تشنہ نسيم سحر
اسی ميں ہے مرے دل کا تمام افسانہ
کوئی بتائے مجھے يہ غياب ہے کہ حضور
سب آشنا ہيں يہاں ، ايک ميں ہوں بيگانہ
فرنگ ميں کوئی دن اور بھی ٹھہر جاؤں
مرے جنوں کو سنبھالے اگر يہ ويرانہ
مقام عقل سے آساں گزر گيا اقبال
مقام شوق ميں کھويا گيا وہ فرزانہ

-----------------------

Translitration

Khirad Ne Mujh Ko Atta Ki Nazar Hakeemana
Sikhai Ishq Ne Mujh Ko Hadees-e-Rindana

Na Bada Hai, Na Soorahi, Na Dour-e-Pemana
Faqt Nigah Se Rangeen Hai Bazm-e-Janana

Meri Nuwa-e-Preshan Ko Shayari Na Samajh
Ke Main Hun Mehram-e-Raaz-e-Darun-e-Maikhana

Kali Ko Dekh Ke Hai Tashna-e-Naseem-e-Sehar
Issi Mein Hai Mere Dil Ka Tamam Afsana

Koi Bataye Mujhe Ye Ghayaab Hai Ke Huzoor
Sub Ashna Hain Yahan, Aik Main Hun Begana

Farang Mein Koi Din Aur Bhi Thehar Jaun
Mere Junoon Ko Sanbhale Agar Ye Werana

Maqam-e-Aqal Se Asan Guzar Gya Iqbal
Maqam-e-Shauq Mein Khoya Gya Woh Farzana

-------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP