Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

نگاہ فقر ميں شان سکندری کيا ہے


نگاہ فقر ميں شان سکندری کيا ہے
خراج کی جو گدا ہو ، وہ قيصری کيا ہے!
بتوں سے تجھ کو اميديں ، خدا سے نوميدی
مجھے بتا تو سہی اور کافری کيا ہے!
فلک نے ان کو عطا کی ہے خواجگی کہ جنھيں
خبر نہيں روش بندہ پروری کيا ہے
فقط نگاہ سے ہوتا ہے فيصلہ دل کا
نہ ہو نگاہ ميں شوخی تو دلبری کيا ہے
اسی خطا سے عتاب ملوک ہے مجھ پر
کہ جانتا ہوں مآل سکندری کيا ہے
کسے نہيں ہے تمنائے سروری ، ليکن
خودی کی موت ہو جس ميں وہ سروری کيا ہے
خوش آگئی ہے جہاں کو قلندری ميری
وگرنہ شعر مرا کيا ہے ، شاعری کيا ہے

------------------------

Translitration

Nigah-e-Faqr Mein Shan-e-Sikandari Kya Hai
Kharaj Ki Jo Gada Ho, Woh Qaisri Kya Hai!

Buton Se Tujh Ko Umeedain, Khuda Se Naumeedi
Mujhe Bata To Sahi Aur Kafiri Kya Hai!

Falak Ne Un Ko Atta Ki Hai Khawajgi Ke Jinhain
Khabar Nahin Rawish-e-Banda Parwari Kya Hai

Faqt Nigah Se Hota Hai Faisla Dil Ka
Na Ho Nigah Mein Shaukhi To Dilbari Kya Hai

Issi Khata Se Itaab-e-Mulook Hai Mujh Par
Ke Janta Hun Maal-e-Sikandari Kya Hai

Kise Nahin Hai Tamana-e-Sarwari, Lekin
Khudi Ki Mout Ho Jis Mein Woh Sarwari Kya Hai!

Khush Aa Gyi Hai Jahan Ko Qalandari Meri
Wagarna Shair Mera Kya Hai, Shayari Kya Hai!

-------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP