Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

خرد کے پاس خبر کے سوا کچھ اور نہيں


خرد کے پاس خبر کے سوا کچھ اور نہيں
ترا علاج نظر کے سوا کچھ اور نہيں
ہر اک مقام سے آگے مقام ہے تيرا
حيات ذوق سفر کے سوا کچھ اور نہيں
گراں بہا ہے تو حفظ خودی سے ہے ورنہ
گہر ميں آب گہر کے سوا کچھ اور نہيں
رگوں ميں گردش خوں ہے اگر تو کيا حاصل
حيات سوز جگر کے سوا کچھ اور نہيں
عروس لالہ! مناسب نہيں ہے مجھ سے حجاب
کہ ميں نسيم سحر کے سوا کچھ اور نہيں
جسے کساد سمجھتے ہيں تاجران فرنگ
وہ شے متاع ہنر کے سوا کچھ اور نہيں
بڑا کريم ہے اقبال بے نوا ليکن
عطائے شعلہ شرر کے سوا کچھ اور نہيں

-------------------

Translitration

Khird Ke Paas Khabar Ke Siwa Kuch Aur Nahin
Tera Ilaj Nazar Ke Siwa Kuch Aur Nahin

Har Ek Maqam Se Agay Maqam Hai Tera
Hayat Zauq-e-Safar Ke Siwa Kuch Aur Nahin

Giran Baha Hai To Hifz-e-Khudi Se Hai Warna
Guhar Mein Aab-e-Guhar Ke Siwa Kuch Aur Nahin

Ragon Mein Gardish-e-Khoon Hai Agar To Kya Hasil
Hayat Souz-e-Jigar Ke Siwa Kuch Aur Nahin

Uroos-e-Lala! Munasib Nahin Hai Mujh Se Hijab
Ke Main Naseem-e-Sehar Ke Siwa Kuch Aur Nahin

Jise Kisaad Samjhte Hain Tajiran-e-Farang
Woh Shay Mata-e-Hunar Ke Siwa Kuch Aur Nahin

Bara Kareem Hai Iqbal Be-Nawa Lekin
Atta-e-Shola Sharar Ke Siwa Kuch Aur Nahin

-------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP