Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

يہ پيام دے گئی ہے مجھے باد صبح گاہی


يہ پيام دے گئی ہے مجھے باد صبح گاہی
کہ خودی کے عارفوں کا ہے مقام پادشاہی
تری زندگی اسی سے ، تری آبرو اسی سے
جو رہی خودی تو شاہی ، نہ رہی تو روسياہی
نہ ديا نشان منزل مجھے اے حکيم تو نے
مجھے کيا گلہ ہو تجھ سے ، تو نہ رہ نشيں نہ راہی
مرے حلقہ سخن ميں ابھی زير تربيت ہيں
وہ گدا کہ جانتے ہيں رہ و رسم کجکلاہی
يہ معاملے ہيں نازک ، جو تری رضا ہو تو کر
کہ مجھے تو خوش نہ آيا يہ طريق خانقاہی
تو ہما کا ہے شکاری ، ابھی ابتدا ہے تيری
نہيں مصلحت سے خالی يہ جہان مرغ و ماہی
تو عرب ہو يا عجم ہو ، ترا لا الہ الا
لغت غريب ، جب تک ترا دل نہ دے گواہی

---------------------

Translitration

Ye Peyam De Gyi Hai Mujhe Bad-e-Subahgahi
Ke Khudi Ke Arifon Ka Hai Maqam Padshahi

Teri Zindagi Issi Se, Teri Aabru Issi Se
Jo Rahi Khudi To Shahi, Na Rahi To Roosiyahi

Na Diya Nishan-e-Manzil Mujhe Ae Hakeem Tu Ne
Mujhe Kya Gila Ho Tujh Se, Tu Na Reh Nasheen Na Rahi

Mere Halqa-e-Sukhan Mein Abhi Zair-e-Tarbiat Hain
Woh Gada Ke Jante Hain Rah-o-Rasm-e-Kajkalahi

Ye Maamle Hain Nazuk, Jo Teri Raza Ho Tu Kar
Ke Mujhe To Khush Na Aya Ye Tareeq-e-Khanqahi

Tu Huma Ka Hai Shikari, Abhi Ibtada Hai Teri
Nahin Muslihat Se Khali Ye Jahan-e-Murg-o-Mahi

Tu Arab Ho Ya Ajam Ho, Tera ‘LA ILAHA ILLAH’
Lughat-e-Ghareeb, Jab Tak Tera Dil Na De Gawahi

-------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP