Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

کمال ترک نہيں آب و گل سے مہجوری


کمال ترک نہيں آب و گل سے مہجوری
کمال ترک ہے تسخير خاکی و نوری
ميں ايسے فقر سے اے اہل حلقہ باز آيا
تمھارا فقر ہے بے دولتی و رنجوری
نہ فقر کے ليے موزوں ، نہ سلطنت کے ليے
وہ قوم جس نے گنوايا متاع تيموری
سنے نہ ساقی مہوش تو اور بھی اچھا
عيار گرمی صحبت ہے حرف معذوری
حکيم و عارف و صوفی ، تمام مست ظہور
کسے خبر کہ تجلی ہے عين مستوری
وہ ملتفت ہوں تو کنج قفس بھی آزادی
نہ ہوں تو صحن چمن بھی مقام مجبوری
برا نہ مان ، ذرا آزما کے ديکھ اسے
فرنگ دل کی خرابی ، خرد کی معموری

--------------------

Translitration

Kamal-E-Tark Nahin Aab-O-Gil Se Mehjoori
Kamal-E-Tark Hai Taskheer-E-Khaki-O-Noori

Main Aese Faqr Se Ae Ahl-E-Halqa Baaz Aya
Tumhara Faqr Hai Be-Doulati-O-Ranjoori

Na Faqr Ke Liye Mouzun, Na Saltanat Ke Liye
Who Qoum Jis Ne Ganwaya Mataa-E-Taimoori

Sune Na Saqi-E-Mehwash To Aur Bhi Acha
Ayar-E-Garmi-E-Sohbat Hai Harf-E-Maazoori

Hakeem-O-Arif-O-Sufi, Tamam Mast-E-Zahoor
Kise Khabar K Tajalli Hai Ayn Mastoori

oh Multafat Hon To Kunj Qafs Bhi Azadi
Na Hon To Sehat-E-Chaman Bhi Maqam-E-Majboori

Bura Na Maan, Zara Azma Ke Dekh Isse
Farang Dil Ki Kharabi, Khirad Ki Maamoori

-------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP