Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

امين راز ہے مردان حر کی درويشی


امين راز ہے مردان حر کی درويشی
کہ جبرئيل سے ہے اس کو نسبت خويشی
کسے خبر کہ سفينے ڈبو چکی کتنے
فقيہ و صوفی و شاعر کی نا خوش انديشی
نگاہ گرم کہ شيروں کے جس سے ہوش اڑ جائيں
نہ آہ سرد کہ ہے گوسفندی و ميشی
طبيب عشق نے ديکھا مجھے تو فرمايا
ترا مرض ہے فقط آرزو کی بے نيشی
وہ شے کچھ اور ہے کہتے ہيں جان پاک جسے
يہ رنگ و نم ، يہ لہو ، آب و ناں کی ہے بيشی

-----------------------

Translitration

Ameen-e-Raaz Hai Mardan-e-Hur Ki Darveshi
Ke Jibraeel (A.S.) Se Hai Iss Ko Nisbat-e-Khoweshi

Kise Khabar Ke Safinay Dobo Chuki Kitne
Faqeeh-o-Sufi-o-Shayar Ki Na-Khush Andeshi

Nigah-e-Garam Ke Sheron Ke Jis Se Hosh Urh Jaen
Na Aah-e-Sard Ke Hai Gosafandi-o-Maishi

Tabeeb-e-Ishq Ne Dekha Mujhe To Farmaya
Tera Marz Hai Faqat Arzoo Ki Be-Naishi

Woh Shay Kuch Aur Hai Kehte Hain Jaan-e-Paak Jise
Ye Rang-o-Nam, Ye Lahoo, Aab-o-Naa Ki Hai Baishi

-------------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP