Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

وہ حرف راز کہ مجھ کو سکھا گيا ہے جنوں


وہ حرف راز کہ مجھ کو سکھا گيا ہے جنوں
خدا مجھے نفس جبرئيل دے تو کہوں
ستارہ کيا مری تقدير کی خبر دے گا
وہ خود فراخی افلاک ميں ہے خوار و زبوں
حيات کيا ہے ، خيال و نظر کی مجذوبی
خودی کی موت ہے انديشہ ہائے گونا گوں
عجب مزا ہے ، مجھے لذت خودی دے کر
وہ چاہتے ہيں کہ ميں اپنے آپ ميں نہ رہوں
ضمير پاک و نگاہ بلند و مستی شوق
نہ مال و دولت قاروں ، نہ فکر افلاطوں
سبق ملا ہے يہ معراج مصطفی سے مجھے
کہ عالم بشريت کی زد ميں ہے گردوں
يہ کائنات ابھی ناتمام ہے شايد
کہ آرہی ہے دما دم صدائے 'کن فيکوں'
علاج آتش رومی کے سوز ميں ہے ترا
تری خرد پہ ہے غالب فرنگيوں کا فسوں
اسی کے فيض سے ميری نگاہ ہے روشن
اسی کے فيض سے ميرے سبو ميں ہے جيحوں

-------------------------

Translitration

Woh Harf-e-Raaz Ke Mujh Ko Sikha Gya Hai Junoon
Khuda Mujhe Nafs-e-Jibraeel De To Kahoon

Sitara Kya Meri Taqdeer Ki Khabar De Ga
Woh Khud Farakhi-e-Aflaak Mein Hai Khwaar-o-Zaboon

Hayat Kya Hai, Khiyal-o-Nazar Ki Majzoobi
Khudi Ki Mout Hai Andesha Ha’ay Goonagoon

Ajab Maza Hai, Mujhe Lazzat-e-Khudi De Kar
Woh Chahte Hain Ke Main Apne Aap Mein Na Rahoon

Zameer-e-Paak-o-Nigah-e-Buland-o-Masti-e-Shauq
Na Maal-o-Doulat-e-Qaroon, Na Fikar-e-Aflatoon

Sabaq Mila Hai Ye Miraaj-E-Mustafa (S.A.W.) Se Mujhe
Ke Alam-e-Bashriyat Ki Zad Mein Hai Gardoon

Ye Kainat Abhi Na-Tamam Hai Shaid
Ke Aa Rahi Hai Damadam Sada’ay ‘Kun Fayakoon’

Elaj Atish-E-Rumi Ke Soz Mein Hai Tera
Teri Khirad Pe Hai Ghalib Farangion Ka Fasoon

Ussi Ke Faiz Se Meri Nigah Hai Roshan
Ussi Ke Faiz Se Mere Saboo Mein Hai Jehoon

--------------------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP