Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

پريشاں ہوکے ميری خاک آخر دل نہ بن جائے

پريشاں ہوکے ميری خاک آخر دل نہ بن جائے
جو مشکل اب ہے يارب پھر وہی مشکل نہ بن جائے
نہ کر ديں مجھ کو مجبور نوا فردوس ميں حوريں
مرا سوز دروں پھر گرمی محفل نہ بن جائے
کبھی چھوڑی ہوئی منزل بھی ياد آتی ہے راہی کو
کھٹک سی ہے ، جو سينے ميں ، غم منزل نہ بن جائے
بنايا عشق نے دريائے ناپيدا کراں مجھ کو
يہ ميری خود نگہداری مرا ساحل نہ بن جائے
کہيں اس عالم بے رنگ و بو ميں بھی طلب ميری
وہی افسانہ دنبالہ محمل نہ بن جائے
عروج آدم خاکی سے انجم سہمے جاتے ہيں
کہ يہ ٹوٹا ہوا تارا مہ کامل نہ بن جائے

-------------------------------

Translitration

Preshan Ho Ke Meri Khaak Akhir Dil Na Ban Jaye
Jo Mushkil Ab Hai Ya Rab Phir Wohi Mushkil Na Ban Jaye

Na Kar Dain Mujh Ko Majboor-e-Nawa Firdous Mein Hoorain
Mera Souz-e-Daroon Phir Garmi-e-Mehfil Na Ban Jaye

Kabhi Chhori Huwi Manzil Bhi Yaad Ati Hai Raahi Ko
Khatak Si Hai, Jo Sinay Mein, Gham-e-Manzil Na Ban Jaye

Banaya Ishq Ne Darya’ay Na-Payda Karan Mujh Ko
Ye Meri Khud Nigahdari Mera Sahil Na Ban Jaye

Kahin Iss Alam-e-Be-Rang-o-Bu Mein Bhi Talab Meri
Wohi Afsana-e-Dunbala-e-Mehmil Na Ban Jaye

Urooj-e-Adam-e-Khaki Se Anjum Sehme Jate Hain
Ke Ye Toota Hua Tara Mah-e-Kamil Na Ban Jaye

----------------------

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP