Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

ابليس کي مجلس شوري 1936ء

 

ابليس

يہ عناصر کا پرانا کھيل، يہ دنيائے دوں
ساکنان عرش اعظم کي تمناؤں کا خوں!
اس کي بربادي پہ آج آمادہ ہے وہ کارساز
جس نے اس کا نام رکھا تھا جہان کاف و نوں
ميں نے دکھلايا فرنگي کو ملوکيت کا خواب
ميں نے توڑا مسجد و دير و کليسا کا فسوں
ميں نے ناداروں کو سکھلايا سبق تقدير کا
ميں نے منعم کو ديا سرمايہ داري کا جنوں
کون کر سکتا ہے اس کي آتش سوزاں کو سرد
جس کے ہنگاموں ميں ہو ابليس کا سوز دروں
جس کي شاخيں ہوں ہماري آبياري سے بلند
کون کر سکتا ہے اس نخل کہن کو سرنگوں!


پہلا مشير


اس ميں کيا شک ہے کہ محکم ہے يہ ابليسي نظام
پختہ تر اس سے ہوئے خوئے غلامي ميں عوام
ہے ازل سے ان غريبوں کے مقدر ميں سجود
ان کي فطرت کا تقاضا ہے نماز بے قيام
آرزو اول تو پيدا ہو نہيں سکتي کہيں
ہو کہيں پيدا تو مر جاتي ہے يا رہتي ہے خام
يہ ہماري سعي پيہم کي کرامت ہے کہ آج
صوفي و ملا ملوکيت کے بندے ہيں تمام
طبع مشرق کے ليے موزوں يہي افيون تھي
ورنہ 'قوالي' سے کچھ کم تر نہيں 'علم کلام'!
ہے طواف و حج کا ہنگامہ اگر باقي تو کيا
کند ہو کر رہ گئي مومن کي تيغ بے نيام
کس کي نوميدي پہ حجت ہے يہ فرمان جديد؟
'ہے جہاد اس دور ميں مرد مسلماں پر حرام


دوسرا مشير



خير ہے سلطاني جمہور کا غوغا کہ شر
تو جہاں کے تازہ فتنوں سے نہيں ہے با خبر


پہلا مشير



ہوں، مگر ميري جہاں بيني بتاتي ہے مجھے
جو ملوکيت کا اک پردہ ہو، کيا اس سے خطر!
ہم نے خود شاہي کو پہنايا ہے جمہوري لباس
جب ذرا آدم ہوا ہے خود شناس و خود نگر
کاروبار شہرياري کي حقيقت اور ہے
يہ وجود مير و سلطاں پر نہيں ہے منحصر
مجلس ملت ہو يا پرويز کا دربار ہو
ہے وہ سلطاں، غير کي کھيتي پہ ہو جس کي نظر
تو نے کيا ديکھا نہيں مغرب کا جمہوري نظام
چہرہ روشن، اندروں چنگيز سے تاريک تر!


تيسرا مشير



روح سلطاني رہے باقي تو پھر کيا اضطراب
ہے مگر کيا اس يہودي کي شرارت کا جواب؟
وہ کليم بے تجلي، وہ مسيح بے صليب
نيست پيغمبر و ليکن در بغل دارد کتاب
کيا بتاؤں کيا ہے کافر کي نگاہ پردہ سوز
مشرق و مغرب کي قوموں کے ليے روز حساب!
اس سے بڑھ کر اور کيا ہوگا طبيعت کا فساد
توڑ دي بندوں نے آقاؤں کے خيموں کي طناب!


چوتھا مشير



توڑ اس کا رومہ الکبرے کے ايوانوں ميں ديکھ
آل سيزر کو دکھايا ہم نے پھر سيزر کا خواب
کون بحر روم کي موجوں سے ہے لپٹا ہوا
'گاہ بالد چوں صنوبر، گاہ نالد چوں رباب،


تيسرا مشير



ميں تو اس کي عاقبت بيني کا کچھ قائل نہيں
جس نے افرنگي سياست کو کيا يوں بے حجاب


پانچواں مشير
(ابليس کو مخاطب کرکے )


اے ترے سوز نفس سے کار عالم استوار
تو نے جب چاہا، کيا ہر پردگي کو آشکار
آب و گل تيري حرارت سے جہان سوز و ساز
ابلہ جنت تري تعليم سے دانائے کار
تجھ سے بڑھ کر فطرت آدم کا وہ محرم نہيں
سادہ دل بندوں ميں جو مشہور ہے پروردگار
کام تھا جن کا فقط تقديس و تسبيح و طواف
تيري غيرت سے ابد تک سرنگون و شرمسار
گرچہ ہيں تيرے مريد افرنگ کے ساحر تمام
اب مجھے ان کي فراست پر نہيں ہے اعتبار
وہ يہودي فتنہ گر، وہ روح مزدک کا بروز
ہر قبا ہونے کو ہے اس کے جنوں سے تار تار
زاغ دشتي ہو رہا ہے ہمسر شاہين و چرغ
کتني سرعت سے بدلتا ہے مزاج روزگار
چھا گئي آشفتہ ہو کر وسعت افلاک پر
جس کو ناداني سے ہم سمجھے تھے اک مشت غبار
فتنہء فردا کي ہيبت کا يہ عالم ہے کہ آج
کانپتے ہيں کوہسار و مرغزار و جوئبار
ميرے آقا! وہ جہاں زير و زبر ہونے کو ہے
جس جہاں کا ہے فقط تيري سيادت پر مدار


ابليس
(
اپنے مشيروں سے )



ہے مرے دست تصرف ميں جہان رنگ و بو
کيا زميں، کيا مہر و مہ، کيا آسمان تو بتو
ديکھ ليں گے اپني آنکھوں سے تماشا غرب و شرق
ميں نے جب گرما ديا اقوام يورپ کا لہو
کيا امامان سياست، کيا کليسا کے شيوخ
سب کو ديوانہ بنا سکتي ہے ميري ايک ہو
کارگاہ شيشہ جو ناداں سمجھتا ہے اسے
توڑ کر ديکھے تو اس تہذيب کے جام و سبو!
دست فطرت نے کيا ہے جن گريبانوں کو چاک
مزدکي منطق کي سوزن سے نہيں ہوتے رفو
کب ڈرا سکتے ہيں مجھ کو اشتراکي کوچہ گرد
يہ پريشاں روزگار، آشفتہ مغز، آشفتہ مو
ہے اگر مجھ کو خطر کوئي تو اس امت سے ہے
جس کي خاکستر ميں ہے اب تک شرار آرزو
خال خال اس قوم ميں اب تک نظر آتے ہيں وہ
کرتے ہيں اشک سحر گاہي سے جو ظالم وضو
جانتا ہے، جس پہ روشن باطن ايام ہے
مزدکيت فتنہ فردا نہيں، اسلام ہے!


(2)



جانتا ہوں ميں يہ امت حامل قرآں نہيں
ہے وہي سرمايہ داري بندہ مومن کا ديں
جانتا ہوں ميں کہ مشرق کي اندھيري رات ميں
بے يد بيضا ہے پيران حرم کي آستيں
عصر حاضر کے تقاضاؤں سے ہے ليکن يہ خوف
ہو نہ جائے آشکارا شرع پيغمبر کہيں
الحذر! آئين پيغمبر سے سو بار الحذر
حافظ ناموس زن، مرد آزما، مرد آفريں
موت کا پيغام ہر نوع غلامي کے ليے
نے کوئي فغفور و خاقاں، نے فقير رہ نشيں
کرتا ہے دولت کو ہر آلودگي سے پاک صاف
منعموں کو مال و دولت کا بناتا ہے اميں
اس سے بڑھ کر اور کيا فکر و عمل کا انقلاب
پادشاہوں کي نہيں، اللہ کي ہے يہ زميں!
چشم عالم سے رہے پوشيدہ يہ آئيں تو خوب
يہ غنيمت ہے کہ خود مومن ہے محروم يقيں
ہے يہي بہتر الہيات ميں الجھا رہے
يہ کتاب اللہ کي تاويلات ميں الجھا رہے


(3)



توڑ ڈاليں جس کي تکبيريں طلسم شش جہات
ہو نہ روشن اس خدا انديش کي تاريک رات
ابن مريم مر گيا يا زندہ جاويد ہے
ہيں صفات ذات حق، حق سے جدا يا عين ذات؟
آنے والے سے مسيح ناصري مقصود ہے
يا مجدد، جس ميں ہوں فرزند مريم کے صفات؟
ہيں کلام اللہ کے الفاظ حادث يا قديم
امت مرحوم کي ہے کس عقيدے ميں نجات؟
کيا مسلماں کے ليے کافي نہيں اس دور ميں
يہ الہيات کے ترشے ہوئے لات و منات؟
تم اسے بيگانہ رکھو عالم کردار سے
تا بساط زندگي ميں اس کے سب مہرے ہوں مات
خير اسي ميں ہے، قيامت تک رہے مومن غلام
چھوڑ کر اوروں کي خاطر يہ جہان بے ثبات
ہے وہي شعر و تصوف اس کے حق ميں خوب تر
جو چھپا دے اس کي آنکھوں سے تماشائے حيات
ہر نفس ڈرتا ہوں اس امت کي بيداري سے ميں
ہے حقيقت جس کے ديں کي احتساب کائنات
مست رکھو ذکر و فکر صبحگاہي ميں اسے
پختہ تر کر دو مزاج خانقاہي ميں اسے

............

Transliteration

 

Iblees Ki Majlis-e-Shura

 

1936


 

 

 

Iblees

 

 

 

Ye Anasir Ka Purana Khail, Ye Dunya-e-Doon
Sakinan-e-Arsh-e-Azam Ki Tamanaon Ka Khoon!


 

Uss Ki Barbadi Pe Aaj Aamada Hai Woh Kaarsaaz
Jis Ne Uss Ka Nam Rakha Tha Jahan-e-Kaaf-o-Noon



 

Mein Ne Dikhlaya Farangi Ko Mulukiyat Ka Khawab
Mein Ne Tora Masjid-o-Dair-o-Kalisa Ka Fusoon


 

Mein Ne Nadaron Ko Sikhlaya Sabaq Taqdeer Ka
Mein Ne Muneim Ko Diya Sarmayadari Ka Junoon



 

Kon Kar Sakta Hai Uss Ki Aatish Soozan Ko Sard
Jis Ke Hungamon Mein Ho Iblees Ka Souz-e-Daroon



 

Jis Ki Shakhain Hon Humari Aabiyari Se Buland
Kon Kar Sakta Hai Uss Nakhl-e-Kuhan Ko Ser Nigoon!



 

Pehla Musheer


 

Iss Mein Kya Shak Hai Ke Muhkam Hai Ye Ibleesi Nizam
Pukhta Tar Iss Se Huwe Khuay Ghulami Mein Aawam



 

Hai Azal Se In Gharibon Ke Muqaddar Mein Sujood
In Ki Fitrat Ka Taqaza Hai Namaz-e-Be Qayam


 

Arzoo Awwal To Paida Ho Nahin Sakti Kahin
Ho Kahin Paida To Mer Jati Hai Ya Rehti Hai Kham



 

Ye Humari Saee-e-Peham Ki Karamat Hai Ke Aaj
Sufi-o-Mullah Mukuliyat Ke Bande Hain Tamam



 

Taba-e-Mashriq Ke Liye Mouzoon Yehi Afyoon Thi
Warna 'Qawwali' Se Kuch Kam Tar Nahin 'Ilm E Kalam'


 

Hai Tawaf-e-Hajj Ka Hungama Agar Baqi To Kya
Kund Ho Kar Reh Gyi Momin Ki Taeg-e-Be Nayam



 

Kis Ki Naumeedi Pe Hujjat Hai Ye Farman-e-Jadeed
'Hai Jihad Iss Dour Mein Mard-e-Musalman Par Haram!'

 

Dusra Musheer


 

Khair Hai Sultani Jumhoor Ka Ghogha Ke Sherr
Tu Jahan Ke Taza Fitnon Se Nahin Hai Ba-khabar!



 

Pehla Musheer
 

 

Hun, Magar Meri Jahan Beeni Batati Hai Mujhe
Jo Mulukiyat Ka Ek Parda Ho, Kya Uss Se Khatar!

 

Hum Ne Khud Shahi Ko Pehnaya Hai Jumhoori Libas
Jab Zara Aadam Huwa Hai Khud Shanas-o-Khud Nigar



 

Karobar-e-Sheher Yari Ki Haqiqat Aur Hai
Ye Wujood-e-Meer-o-Sultan Par Nahin Hai Munhasar



 

Majlis-e-Millat Ho Ya Parvaiz Ka Darbar Ho
Hai Woh Sultan, Ghair Ki Khaiti Pe Ho Jis Ki Nazar



 

Tu Ne Kya Dekha Nahin Maghrib Ka Jumhoori Nizam
Chehra Roshan, Androon Changaiz Se Tareek Tar!


 

Teesra Musheer

 

Rooh-e-Sultani Rahe Baqi To Phir Kya Iztarab
Hai Magar Kya Uss Yahoodi Ki Shararat Ka Jawab?



 

Woh Kaleem Be-Tajalli, Woh Maseeh Be-Saleeb
Neest Peghambar Wa Lekin Dar Baghal Darad Kitab



 

Kya Bataun Kya Hai Kafir Ki Nigah-e-Parda Souz
Mashriq-o-Maghrib Ki Qaumon Ke Liye Roz-e-Hisab



 

Iss Se Barh Kar Aur Kya Ho Ga Tabiat Ka Fasad
Torh Di Bandon Ne Aaqaon Ke Khaimon Ki Tanab!



 

Chotha Musheer


 

Torh Uss Ka Rumatul Kubra Ke Aewanon Mein Dekh
Aal-e-Ceaser Ko Dikhaya Hum Ne Phir Ceaser Ka Khawab  


 

Kon Behar-e-Rome Ki Moujon Se Hai Lipta Huwa
'Gah Balad Choon Sanobar' Gah Nalad Choon Rabab



 

Teesra Musheer


 

Mein To Uss Ki Aaqabat Beeni Ka Kuch Qael Nahin
Jis Ne Afrangi Siasat Ko Kiya Yun Behijab



 

Panchwan Musheer
(Iblees Ko Mukhatib Kar Ke)


Ae Tere Souz-e-Nafas Se Kaar-e-Aalam Ustawar!
Tu Ne Jab Chaha, Kiya Har Pardagi Ko Ashikaar


Aab-o-Gill Teri Hararat Se Jahan-e-Souz-o-Saaz
Abla-e-Jannat Teri Taleem Se Danaye Kaar


Tujh Se Barh Kar Fitrat-e-Aadam Ka Woh Mehram Nahin
Sada Dil Bandon Mein Jo Mashoor Hai Parwardigar

Kaam Tha Jin Ka Fakat Taqdees-o-Tasbeeh-o-Tawaf
Teri Gairat Se Abad Tak Sar Nigun-o-Sharamsaar

Those whose business was confined to sanctifying, singing hymns and going round: 

Garcha Hain Tere Mureed Afrang Ke Sahir Tamam
Ab Mujhe In Ki Farasat Par Nahin Hai Atibar

Ye Yahoodi Fitna Gar, Woh Rooh-e-Mazdak Ka Barooz
Har Kaba Hone Ko Hai Iss Ke Janoon Se Tar Tar


Zagh-e-Dashti Ho Raha Hai Humsar-e-Shaheen-o-Chargh
Kitni Sura’at Se Badalta Hai Mazaaj-e-Rozgar

Cha Gyi Ashufta Ho Kar Wusat-e-Aflaak Par
Jis Ko Nadani Se Hum Samajhe The Ek Musht-e-Ghubar


Fitna-e-Farda Ki Haibat Ka Ye Alam Hai Ke Aaj
Kanpte Hain Kohsar-o-Murghzar-o-Ju’ay bar

Mere Aaqa! Vo Jahan Zair-o-Zabar Hone Ko Hai
Jis Jahan Ka Hai Fakat Teri Sayadat Par Madar

Iblees (Apne Musheeron Se)

Hai Mere Dast-e-Tasarruf Mein Jahan-e-Rang O Bu
Kya Zameen, Kya Mehar O Mah, Kya Asaman-e-Tu Ba Tu

Dekh Lain Ge Apni Ankhon Se Tamasha Gharb-o-Sharak
Main Ne Jab Garma Diya Aqwam-e-Europe Ka Lahoo

Kya Imamane Siasat, Kya Kaleesa Ka Shayookh
Sub Ko Diwana Bana Sakti Hai Meri Aik Hoo

Kargah Sheesha  Jo Nadan Samjhta Hai Usse
Tor Kar Dekhe To Iss Tehzeeb Ke Jam-o-Saboo!

Dast-e-Fitrat Ne Kiya Hai Jin Girebanon Ko Chaak
Mazdaki Mantaq Ki Souzan Se Nahin Hote Rafoo


Kab Dara Sakte Hain Mujh Ko Ishtaraki Koocha Gard
Ye Preshan Rozgar, Ashufta Maghz, Ashufta Mu

Hai Agar Mujh Ko Khatar Koi To Uss Ummat Se Hai
Jis Ki Khatstar Mein Hai Ab Tak Shirar-e-Arzu

Khal Khal Iss Qaum Mein Ab Tak Nazar Ate Hain Vo
Karte Hain Ashak-E-Sehargahi Se Jo Zalim Wazoo

Janta Hai, Jis Pe Roshan Batin-e-Ayyam Hai
Mazdkiat Fitna-e-Farda Nahin, Islam Hai!

Janta Hun Main Ye Ummat Hamal-e-Quran Nahin
Hai Wohi Sarmayadari Banda-e-Momin Ka Deen

Janta Hun Main Ke Mashriq Ki Andheri Raat Mein
Be Yad-e-Baiza Hai Peeran-e-Haram Ki Asteen

Asre-e-Hazir Ke Taqazaon Se Hai Lekin Ye Khof
Ho Na Jaye Ashakara Shara-e-Peghambar Kahin

 



Alhazar! Aaeen-e-Peghambar Se Sou Bar Alhazar
Hafiz-e-Namoos-e-Zan, Mard Azma, Mard-e-Afreen

Karta Hai Doulat Ko Har Aaludgi Se Pak Saaf

Munemon Ko Maal-o-Doulat Ka Banata Hai Ameen


Iss Se Barh Kar Aur Kya Fikar-o-Amal Ka Inqilaab
Padshahon Ki Nahin, Allah Ki Hai Ye Zameen!


Chasme Alam Se Rahe Poshida Ye Aaeen To Khoob
Ye Ghanimat Hai Ke Khud Momin Hai Mehroom-e-Yaqeen


Hai Ye Behter Elahiyat Mein Uljha Rahe
Ye Kitab Ullah Ki Taweelat Mein Uljha Rahe


Tor Dalain Jis Ki Takbeerain Talism-e-Shash Jihat
Ho Na Roshan Uss Khuda Andaish Ki Tareek Raat


Ibne Mariam Mar Gya Ya Zinda Javaid Hai
Hain Sifat-e-Zaat-e-Haq, Haq Se Judda Ya Ayn Zaat?
Ane Wale Se Maseeh-e-Nasiri Maqsood Hai

Ye Mujaddid, Jis Mein Hon Farzand-e-Mariam Ke Sifat?


Hain Kalam Ullah Ke Alfaz Hadis Ya Qadeem
Ummat Marhoom Ke Hai Kis Aqeede Mein Nijat?


Kya Musalman Ke Liye Kafi Nahin Iss Dour Mein
Ye Elahiyat Ke Tarshay Huwe Laat- O-Manaat?


Tum Isse Begana Rakho Alam-e-Kirdar Se
Ta Bisat-e-Zindagi Mein Iss Ke Sub Muhre Hon Maat

KKhair Issi Mein Hai, Qayamat Tak Rahe Momin Ghulam
Chor Kar Auron Ki Khatir Ye Jahan-e-Be-Sabat


Hai Wohi Shair-o-Tasawwuf Iss Ke Haq Mein Khoob Tar
Jo Chupa De Iss Ki Ankhon Se Tamasha-e-Hayat


Har Nafas Darta Hun Iss Ummat Ki Baidari Se Mein
Hai Haqiqat Jis Ke Deen Ki Ahtisaab-e-Kainat


Mast Rakho Zikar-o-Fikar-e-Subhgahi Mein Isse
Pukhta Tar Kar Do Mazaaj-e-Khanqahi Mein Isse


IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP