Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

آواز غيب

 

 

 

 

آتي ہے دم صبح صدا عرش بريں سے
کھويا گيا کس طرح ترا جوہر ادراک!
کس طرح ہوا کند ترا نشتر تحقيق
ہوتے نہيں کيوں تجھ سے ستاروں کے جگر چاک
تو ظاہر و باطن کي خلافت کا سزاوار
کيا شعلہ بھي ہوتا ہے غلام خس و خاشاک
مہر و مہ و انجم نہيں محکوم ترے کيوں
کيوں تري نگاہوں سے لرزتے نہيں افلاک
اب تک ہے رواں گرچہ لہو تيري رگوں ميں
نے گرمي افکار، نہ انديشہ بے باک
روشن تو وہ ہوتي ہے، جہاں بيں نہيں ہوتي
جس آنکھ کے پردوں ميں نہيں ہے نگہ پاک
باقي نہ رہي تيري وہ آئينہ ضميري
اے کشتہء سلطاني و ملائي و پيري

-------------

Transliteration

Awaz-e-Ghaib

 Ati Hai Dam-E-Subah Sadda Arsh-E-Bareen Se

Khoya Gya Kis Tarah Tera Johar-E-Idraak !

Kis Tarah Huwa Kund Tera Nashtar-E-Tehqeeq

Hote Nahin Kyun Tujh Se Sitaron Ke Jagar Chaak

Tu Zahir-O-Batin Ki Khilafat  Ka Sazawaar

Kya Shaola Bhi Hota Hai Ghulam-E-Khs-O-Khashaak

Mehar-O-Mah-O-Anjum Nahin Mehkoom Tere Kyun

Kyun Teri Nigahon Se Larazte Nahin Aflaak

 Ab Tak Hai Rawan Gharcha Lahoo Teri Raagon Mein

Ne Garmi-E-Afkaar, Na Andaish-e-Bebaak

Roshan To Woh Hoti Hai, Jahan Been Nahin Hoti

Jis Ankh Ke Pardon Mein Nahin Hai Nigah-E-Pak

Baqi Na Rahi Teri Woh Aaeena Zameeri

Ae Kushta-e-Sultani-O-Mullai-O-Peeri !

 

 

 

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP