Menu

Content

Breadcrumb

A+ A A-

مسعود مرحوم

 

 

 

 

يہ مہر و مہ، يہ ستارے يہ آسمان کبود
کسے خبر کہ يہ عالم عدم ہے يا کہ وجود
خيال جادہ و منزل فسانہ و افسوں
کہ زندگي ہے سراپا رحيل بے مقصود
رہي نہ آہ ، زمانے کے ہاتھ سے باقي
وہ يادگار کمالات احمد و محمود
زوال علم و ہنر مرگ ناگہاں اس کي
وہ کارواں کا متاع گراں بہا مسعود!
مجھے رلاتي ہے اہل جہاں کي بيدردي
فغان مرغ سحر خواں کو جانتے ہيں سرود
نہ کہہ کہ صبر ميں پنہاں ہے چارئہ غم دوست
نہ کہہ کہ صبر معمائے موت کي ہے کشود
''دلے کہ عاشق و صابر بود مگر سنگ است
ز عشق تا بہ صبوري ہزار فرسنگ است''


(سعدي)


نہ مجھ سے پوچھ کہ عمر گريز پا کيا ہے
کسے خبر کہ يہ نيرنگ و سيميا کيا ہے
ہوا جو خاک سے پيدا، وہ خاک ميں مستور
مگر يہ غيبت صغري ہے يا فنا، کيا ہے!
غبار راہ کو بخشا گيا ہے ذوق جمال
خرد بتا نہيں سکتي کہ مدعا کيا ہے
دل و نظر بھي اسي آب و گل کے ہيں اعجاز
نہيں تو حضرت انساں کي انتہا کيا ہے؟
جہاں کي روح رواں 'لا الہ الا ھو،
مسيح و ميخ و چليپا ، يہ ماجرا کيا ہے!
قصاص خون تمنا کا مانگيے کس سے
گناہ گار ہے کون، اور خوں بہا کيا ہے
غميں مشو کہ بہ بند جہاں گرفتاريم
طلسم ہا شکند آں دلے کہ ما داريم
خودي ہے زندہ تو ہے موت اک مقام حيات
کہ عشق موت سے کرتا ہے امتحان ثبات
خودي ہے زندہ تو دريا ہے بے کرانہ ترا
ترے فراق ميں مضطر ہے موج نيل و فرات
خودي ہے مردہ تو مانند کاہ پيش نسيم
خودي ہے زندہ تو سلطان جملہ موجودات
نگاہ ايک تجلي سے ہے اگر محروم
دو صد ہزار تجلي تلافي مافات
مقام بندئہ مومن کا ہے ورائے سپہر
زميں سے تا بہ ثريا تمام لات و منات
حريم ذات ہے اس کا نشيمن ابدي
نہ تيرہ خاک لحد ہے، نہ جلوہ گاہ صفات
خود آگہاں کہ ازيں خاک داں بروں جستند
طلسم مہر و سپہر و ستارہ بشکستند

--------------

Transliteration 

 Masood Marhoom

 

Ye Mehar-O-Mah, Ye Sitare Ye Asman-E-Kubood

Kise Khabar Ke Ye Alam Addam Hai Ya Ke Wujood

 

 Khiyal-E-Jadah-O-Manzil Fasana-O-Afsoun

 Ke Zindagi Hai Sarapa Raheel-E-Be-Maqsood

 

Rahi Na Aah, Zamane Ke Hath Se Baqi

 Vo Yaadgar-E-Kamalaat -E-Ahmad-O-Mehmood

 

 

Zawal-E-Ilm-O-Hunar Marg-E-Naaghan Uss Ki

 Woh Karwan Ka Mataa-E-Garan Bha Masood !

 

Mujhe Rulati Hai Ahl-E-Jahan Ki Baydardi

 Faghan-E-Mugh-E-Sehar Khawan Ko Jante Hain Surood  

 

Na Keh Ke Sabr Mein Pinhan Hai Chara’ay Gham-e-Dost

 Na Keh Ke Sabr Mu’amaye Mout Ki Hai Kushood 

 

 

 "Dile Ke Ashiq Wa Sabir Bood Magar Sang Ast

 Za Ishq Ta Ba Saboori Hazar Farsang Ast" (Sadi)

 

 

Na Mujh Se Pooch Ke Umer-E-Garaiz Pa Kiya Hai

 Kise Khabar Ke Ye Neerang-O-Seemiya Kya Hai

 

 Huwa Jo Khak Se Paida, Vo Khak Mein Mastoor

 Magar Ye Ghaibat-E-Sughra Hai Ya Fana, Kya Hai !

 

 Ghubar-E-Rah Ko Bakhsha Gya Hai Zauq-E-Jamal

Khirad Bata Nahin Sakti Ke Muddaa Kya Hai

 

 Dil-O-Nazar Bhi Issi Aab-O-Gil Ke Hain Ijaz

Nahin To Hazrat-E-Insan Ki Intiha Kya Hai?

 

Jahan Ki Rooh-E-Rawan ‘LA ILAHA ILLA HOO

 Masih-O-Meekh-O-Chalipa, Ye Majra Kya Hai !

 

 Qasas Khoon-E-Tammana Ka Mangiye Kis Se

 Gunahgar Hai Kon, Aur Khoon Baha Kya Hai

 

 Ghameen Masho Ke Ba Band-E-Jahan Gariftarem

 Talism Ha Shikand Aan Dile Ke Ma Darem

 

 Khudi Hai Zinda To Hai Mout Ek Maqam-E-Hayat

 Ke Ishq Mout Se Karta Hai Imtihan-E-Sabaat

 

 Khudi Hai Zinda To Darya Hai Be-Karana Tera

 Tere Firaq Mein Muztir Hai Mouj-E-Neel-O-Firat

 

 Khudi Hai Murda To Manind-E-Kah Paish-E-Naseem

 Khudi Hai Zinda To Sultan-E-Jumla Moujoodat

 

Nigah Aik Tajalli Se Hai Agar Mehroom

 Dou Sad Hazar Tajalli Talafi-E-Mafaat

 

 Maqam Banda’ay Momin Ka Hai Wara’ay Sipihr

 Zameen Se Ta Ba Surreya Tamam Laat-O-Manaat

 

 Hareem-E-Zaat Hai Iss Ka Nasheman-e-Abdi

 Na Tera Khak-E-Lehad Hai, Na Jalwagah-E-Sifaat

 

Khud Aa-Gahan Ke Azeen Khakdan Baron Jastand

Tilism Mehar-O-Sipihr-O-Sitara Bashkastand

 

 

 

 

 

 

 

 

IIS Logo

www.DervishOnline.com

 

 

IQBAL DEMYSTIFIED - ANDROID APP